تازہ ترین

Posts Tagged “ICJ”

عالمی عدالت کلبھوشن کو رہا نہیں کرنا چاہتی: خاور قریشی

اسلام آباد: عالمی عدالت انصاف میں کلبھوشن یادیو کے کیس میں پاکستان کے وکیل خاور قریشی نے کہا ہے کہ کلبھوشن کہیں نہیں جا رہا۔ وزارت خارجہ اس معاملے پر تفصیلی بیان جاری کرے گی

تفصیلات کے مطابق وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں سپریم کورٹ کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وکیل خاور قریشی کا کہنا تھا کہ بھارتی جاسوس کلبھوشن کہیں نہیں جارہا۔ وزارت خارجہ اس معاملے پر تفصیلی بیان جاری کرے گی۔

ان کے مطابق عالمی عدالت کلبھوشن کو رہا کرنا نہیں چاہ رہی

خاور قریشی کی گفتگو کے دوران ان کے عملے کی صحافیوں سے تلخ کلامی بھی ہوئی۔ عملے کے ایک رکن نے ایک صحافی کا موبائل فون بھی توڑ دیا جس پر صحافیوں نے شدید احتجاج کیا

Read more »

کلبھوشن کیس : عالمی عدالت میں شامل بھارتی جج نے جانبداری دکھا دی

اسلام آباد: عالمی گیارہ رکنی پینل میں شامل بھارتی جج نے جانبداری ظاہر کردی عدالت انصاف میں بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کی پھانسی رکوانے سے متعلق بھارتی درخواست کی سماعت کرنے والے گیارہ رکنی پینل میں شامل بھارتی جج نے جانبداری ظاہر کردی۔

عالمی عدالت انصاف کی جانب سے پھانسی پر حکم امتناع جاری کرنے والیے 11 ججز میں سے ایک بھارتی جج دلویر بھنڈاری بھی تھے جن کے بیان نے مقدمے کی شفافیت مشکوک بنا دی ہے ۔

جج دلویربھنڈاری نے انٹرویومیں کہہ دیا کہ عدالت کا فیصلہ بھارت کی عظیم سفارتی کامیابی ہے۔ بھنڈاری نے اس بات پربےحد خوشی کا اظہارکیا ہے کہ عالمی عدالت نے کلبھوشن کو پھانسی سے بچالیا۔۔

عالمی عدالت انصاف پینل کے بھارتی جج کا جانبدارانہ بیان ہے کہ بےحد خوشی ہے کہ عالمی عدالت نے کلبھوشن کو پھانسی سے بچالیا توسوالات اٹھتے ہیں کہ کیا جانبدارجج کلبھوشن مقدمہ کی سماعت کے اہل ہیں؟  کیا جج کسی فریق کیلئے ذاتی خوشی کا اظہارکرسکتا ہے؟ اور کیا کوئی جج حتمی فیصلہ آنے تک ذاتی رائے دے سکتا ہے؟۔

واضح رہے کہ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کو 3 مارچ 2016 کو گرفتار کیا گیا۔ کلبھوشن کی گرفتاری بلوچستان میں انٹیلی جنس آپریشن کے دوران عمل میں آئی تھی۔ بھارتی نیوی کا حاضر سروس افسر اور خفیہ ایجنسی ’’را ‘‘کا یہ ایجنٹ پاکستان میں حسین مبارک پٹیل کے نام سے سرگرمیاں کر رہا تھا جسے کراچی اور بلوچستان میں تخریب کاری کا ٹاسک دیا گیا تھا۔گرفتاری کے بعد کلبھوشن نے پاکستان میں دہشت گردی اورانتشارپھیلانے کا اعتراف کیا جس کے بعد آرمی ایکٹ کے سیکشن 59 اور سیکرٹ ایکٹ کی شق 3 کے تحت کلبھو شن کے خلاف مقدمہ چلایا گیا۔ کلبھوشن کا فیلڈ جنرل کورٹ مارشل کیا گیا اور گرفتاری کے ایک سال ایک ماہ اور تین دن بعد  اسے سزائے موت سنائی گئی۔

آرمی چیف نے را ایجنٹ کی سزائے موت کی توثیق کی۔ کلبھوشن کو پاکستان کی سالمیت،جاسوسی اور انتشار پھیلانے کے جرم میں سزا ئے موت سنائی گئی کیونکہ فیلڈ جنرل کورٹ مارشل میں دوران سماعت کلبھوشن پرتمام الزامات درست ثابت ہوئے۔

کلبھوشن کی سزائے موت کے خلاف بھارت نے 10 مئی 2017 کو عالمی عدالت انصاف سے رجوع کیا اور کلبھوشن کی سزائے موت پر عملدرآمد رکوانے کی درخواست کی۔ 14 مئی کو پاکستان نے عالمی عدالت انصاف میں بھارتی درخواست کو چیلنج کر دیا۔ 15 مئی کو عالمی عدالت انصاف نے سماعت کے بعد کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا جسے 18 مئی کو سنایا گیا۔

فیصلے میں عالمی عدالت انصاف نے بھارتی درخواست کو قابل سماعت قرار دیتے ہوئے پھانسی کی سزا پر حکم امتناع جاری کیا تھا

Read more »

پاکستان کی جانب سے کلبھوشن کیس لڑنے والے خاور قریشی بھارت کے وکیل تھے

اسلام آباد: عالمی عدالتِ انصاف میں پاکستان کی جانب سے کلبھوشن کیس لڑنے والے خاور قریشی بھارت کے وکیل رہ چکے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق عالمی عدالتِ انصاف میں کلبھوشن کیس میں پاکستان کی جانب سے نمائندگی کرنے والے وکیل خاور قریشی کو 2005 میں کانگریس حکومت نے ایک مقدمے کے لیے نامزد کیا تھا۔

اینزون، بیک ٹیل، جنرل الیکٹرک نے بھارت کے خلاف 5 ارب ڈالر کا کیس دائر کیا تھا جس پر کانگریس حکومت نے خاور قریشی کی خدمات بھی حاصل کی تھیں۔

یاد رہے عالمی عدالتِ انصاف میں کلبھوشن کیس میں پاکستان کی جانب سے نمائندگی کرنے والے وکیل خاور قریشی پر اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے بھی تنقید کی جارہی ہے جبکہ خبریں یہ بھی زیر گردش ہیں کہ انہوں نے مقدمہ لڑنے کے عوض بھاری فیس حاصل کی۔

Read more »

کلبھوشن فیصلہ: عالمی عدالت میں ایک بھی جج مسلم ملک سے نہیں تھا

اسلام آباد: عالمی عدالت میں کلبھوسن یادیو کیس میں بھارت کے حق میں فیصلہ دینے والی عدالت میں ایک بھی جج مسلم ملک سے نہیں تھا

تفصیلات کے مطابق عالمی عدالت انصاف میں کلبھوشن یادیو کیس کا فیصلہ جن ججز دیا ان میں بھارتی، روسی، امریکی، چینی، فرانسیسی و دیگر ممالک کے ججز شامل ہیں لیکن ایک بھی مسلم ملک سے نہیں۔

عالمی عدالت کے سربراہ رونی ابراہیم کا آبائی تعلق مصر سے تھا تاہم اب وہ فرانس کے شہری ہیں جب کہ بینچ میں بھارتی سپریم کورٹ کے سابق جج دلویر بھنڈای بھی شامل ہیں۔

دیگر ججز میں برازیل، روس، امریکا، چین، آسٹریلیا، اٹلی، جاپان، یوگنڈا اور جمیکا کے ججز کلبھوشن یادیو کیس کے بینچ کا حصہ تھے لیکن کسی بھی مسلمان ملک سے کوئی جج شامل نہیں تھا۔

Read more »

عالمی عدالت جیسے اداروں میں مسلمانوں کو انصاف نہیں ملتا، بیرسٹرفروغ نسیم

اسلام آباد : بیرسٹرفروغ نسیم نے کہا ہے کہ یہ بات ثابت ہوچکی ہے کہ عالمی عدالت انصاف جیسےفورمز میں مسلمانوں کو انصاف نہیں ملتا تاہم یہ فائدہ ضرور ہوا کہ دہشت گرد کلبھوشن ایک اسٹیٹ ایکٹر ثابت ہوگیا ہے۔

نجی ٹی وی چینل کو دیے گئے انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ پاکستان کو آئی سی جےمیں جانا ہی نہیں چاہیے تھا اب اگر آئی سی جےکافیصلہ نہ مانا توسلامتی کونسل میں پاکستان مخالف قرارداد آئے گی اس لیے آئی سی جےمیں کیس نہ لڑنا ہی عقل مندی ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ماضی میں بھارت نے بھی عالمی عدالت انصاف کے اختیار کو چیلنج کیا تھا اور کئی معاملات میں بھارت بھی آئی سی جے میں نہیں گیاتھا تاہم اب پاکستان کو آئی سی جےسے نکلنے کیلئے وسیع لابنگ کرنا ہوگی۔

بیرسٹرفروغ نسیم نے کہا کہ آئی سی جے میں بھارت کے خلاف مضبوط کیس پیش کرسکتے تھے لیکن ایسا نہ ہوسکا اگر کلاز آئی کا استعمال کیا جاتا تو یہ دن نہ دیکھنا پڑتا اور بھارتی دہشت گرد کلبھوشن کومثال کے طور پر پیش کرناچاہیے تھا اور اگر کلبھوشن کیس ہو سکتا ہے تو شکیل آفریدی کو بھی رہائی مل سکتی ہے۔

 

Read more »

عالمی عدالت نے مکمل فیصلہ آنے تک کلبھوشن کی پھانسی روک دی

ہیگ: عالمی عدالتِ انصاف نے کلبھوشن کیس میں اپنا فیصلہ سنا دیا‘ فیصلے میں کہا گیا کہ پاکستان بھارت کو کلبھوشن تک قونصلر رسائی دے‘ اور امید ہے کہ پاکستان عالمی عدالت کا مکمل آنے تک سزا نہیں دی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق عالمی عدالتِ انصاف کے گیارہ ججز پر مشتمل جیوری نے یہ فیصلہ سنایا جس کی قیادت رونی ابراہم نامی جج کررہے تھے۔

جج رونی ابراہم نے فیصلہ سناتے ہوئے  کہا کہ پاکستان اور28 ستمبر 1977 سے ویانا کنونشن کا حصہ ہیں اور عدالت میں ثابت ہوا کہ دونوں کا موقف بالکل الگ ہے۔

آرٹیکل ون کے تحت عالمی عدالت کو اس مقدمے کی سماعت کا اختیار ہے۔

پاکستانی قانون کےمطابق کلبھوشن کو 40 دن میں اپیل دائرکرنی ہوگی‘ معلوم نہیں ہوسکاکہ کلبھوشن نےاپیل دائرکی یانہیں۔

امید ہےعالمی عدالت کامکمل فیصلہ آنےتک کلبھوشن کوسزانہیں دی جائےگی۔

پاکستان کلبھوشن سےمتعلق تمام اقدامات سےعدالت کوآگاہ کرے۔

جج رونی نے کہا کہ عدالت صرف تب ہی ریلیف دے سکتی ہے جب بھارت ک طرف سے شواہد مکمل ہوں بھارت ہمیں مقدمے کے میرٹ پر مطمئن نہیں کرپایا۔

فیصلے سے پہلے عدالت نےکلبھوشن یادو کیس پر پاکستان اور بھارت دونوں کا موقف سنایا جس میں کہا گیا کہ پاکستان نے بھارت کو آگاہ کیا تھا کہ قونصلر رسائی کے بارے میں بھارت کا ردعمل دیکھ کرفیصلہ کیا جائے گا۔

 

Read more »

کلبھوشن یادیو : عالمی عدالت اپنا فیصلہ سنانے کے لئے تیار ، بھارت اور پاکستان دونوں پرامید

عالمی انصاف کی عدالت آئی سی جے نے بھارت کی اپیل پر کلبھوشن یادیو تک بھارت کی رسائی دینے یا نہ دینے سے متعلق کیس کی سماعت مکمل کرنے کے بعد اپنا محفوظ فیصلہ جمعرات 18 مئی بروز جمعرات پاکستانی وقت کے مطابق شام 4 بجے سنایا جائے گا۔

بھارت نے عالمی عدالت میں موقف اختیار کیا ہے کہ کلبھوشن یادیو نہ صرف بے قصور ہے بلکہ پاکستان نے اسے ایران کی حدود سے گرفتار کیا ہے اور اس پر مقدمہ چلائے بغیر سزائے موت سنا دی گئی ہے۔ لہذا اسے کلبھوشن تک رسائی فراہم کی جائے اور اس کو رہا کرایا جائے

جبکہ پاکستان کے وکیلوں نے بھارتی موقف کے خلاف مضبوط دلائل دیتے ہوئے کہا کہ کلبھوشن یادیو کو نہ صرف ایران سے جعلی نام اور پاسپورٹ پر پاکستان میں داخل ہوتے ہوئے نہ صرف رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے بلکہ کلبھوشن یادیونے اپنے جرائم کا اعتراف کرتے ہوئے بلوچستان اور کراچی میں دہشتگردوں کی سرپرستی کرنے اور بڑے پیمانے پر پاکستانیوں کا قتل عام کروانے کا بھی اعتراف کیا ہے۔ اس سلسلے میں پاکستانی وکلا کی جانب سے ثبوت کے طور پر کلبھوشن کا اعترافی وڈیو بیان بھی چلانے کی اجازت مانگی جو عالمی عدالت نے مسترد کردی۔ 

پاکستانی وکلا کی جانبے سے موقف اختیار کیا گیا کہ ویانا کنونشن کے تحت عالمی عدالت کلبھوشن کا کیس نہیں سن سکتی اور یہ اس دائرہ اختیار میں نہیں آتا۔

عالمی عدالت نے دنوں فریقین کے دلائل سننے کے بعد اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا جسے اب کل سنایا جائے گا۔

Read more »

بھارتی وکیل نے کلبھوشن یادیو کا مقدمہ لڑنے کے لیے ایک روپیہ فیس وصولی

بھارت: پاکستان میں گرفتار جاسوس کلبھوشن یادیو کو سزائے موت سنائے جانے کے بعد اپنے شہری کو پاکستانی فوج کی قید سے آزاد کروانے کے لیے تمام حربے آزما لیے ہیں۔
بھارت نے عالمی عدالت انصاف میں کلبھوشن یادیو کو رہائی اوراسے سزا سے استثنیٰ دلوانے کے لیے رجوع کیا ہے۔ بھارت کے سب سے مہنگے ترین وکیل ہریش سالو کو عالمی عدالت انصاف میں کلبھوشن یادیو کا مقدمہ لڑنے کی ذمہ داری سونپی گئی ہے۔مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں بھارتی وزیر کارجہ سشما سوراج نے بتایا کہ ہریش سالو نے کلبھوشن یادیو کا مقدمہ لڑنے کے لیے ایک روپیہ فیس لی۔ یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ ہریش سالو کی آئینی ، کمرشل اور ٹیکسیشن کے قوانین میں مہارت رکھتے ہیں۔ اور ان کا شمار بھارت کے مہنگے ترین وکلا میں ہوتا ہے۔
بھارت کی ایک ویب سائٹ کے مطابق 2016ء میں ہریش سالو ایک پیشی کے 6 سے 15 لاکھ روپے چارج کرتے تھے اور کبھی تو ان کے پورے دن کی فیس 60 لاکھ روپے بھی ہوتی ہے۔ ہریش سالو کاگریس سے تلق رکھنے والے ایک معروف سیاستدان این کے پی سالو کے صاحبزادے ہیں۔ جبکہ ان کے دادا بھی وکالت کے پیشے سے منسلک تھے جو کرائم کیسز پر عبور رکھتے تھے۔
 
 
 

Read more »

Scroll Up